(Phobias)کیا آپ خوف زدہ ہیں؟؟؟ فوبیا۔ خوف کا مرض اور اس کی 3 اقسام

Chronic Conditions
phobias
Reading Time: 3 minutes

فوبیا شدید اور غیر معقول خوف کا نام ہے۔ فوبیا میں لوگ کسی خاص ماحول،وقت یا چیز سے غیرمعمولی طور پر خوفردہ ہو جاتے ہیں۔ فوبیا کے شکار لوگ یہ جاننے کے باوجود کہ ان کا خوف بے بنیاد ہے اس کیفیت سے نکل نہیں سکتے۔ یہ خوف اس قدر شدید نوعیت کے ہوتے ہیں کہ ان سے انسان مفلوج ہو کررہ جاتا ہے۔

فوبیا کی متعدد اقسام سامنے آچکی ہیں۔ ماہرین کے مطابق فوبیا تین طرح کے ہو سکتے ہیں۔

۔اگورافوبیا

یہ رش والی جگہوں سے خوفزدہ ہونے کی کیفیت ہے ۔ اگورا قدیم مصر کے ایک بازار کا نام تھا۔ اس فوبیا کے شکار افراد زیادہ چہل پہل والی جگہوں سے خوفزدہ رہتے ہیں۔ ان کا اصل خوف دراصل ایسی جگہوں پر پھنس جانے یا پریشانی کی صورت میں وہاں سے نکل نہ سکنے کا ہوتا ہے۔ ایسے افراد پل یا بینک کی قطار سے اجتناب برتتے نظر آتے ہیں۔ مردوں کی نسبت خواتین اس کا زیادہ شکار ہوتی ہیں۔ اگر اس سے لاپرواہی برتی جائے اور علاج نہ کیا جائے تو ایسے افراد گھر سے نکلنا بالکل چھوڑ بھی سکتے ہیں۔

۔سوشل فوبیا

اس فوبیا کے شکار افراد لوگوں سے ملنے سے کتراتے ہیں اور زیادہ میل جول سے خوفزدہ ریتے ہیں۔ یہ کیفیت فطری شرمیلے پن سے کہیں زیادہ شدید ہوتی ہے۔ ایسے افراد لوگوں کے سامنے جانے سے شدید پریشانی اور خوف محسوس کرتے ہیں۔ وہ اس بارے میں فکرمند رہتے ہیں کہ آیا وہ موقعے کی مناسبت سے بات کر سکیں گے یا نہیں۔ کیونکہ علاج نہ کرنے کی صورت میں یہ فوبیا کسی شخص کی سماجی اور گھریلو زندگی کو متاثر کر سکتا ہے اس لیے اس کا مناسب اور بروقت علاج اہم ہے۔

Read Also: 3 Types of Phobias You May Not Even Know You Have

۔ سپیسیفک فوبیا

یہ فوبیا کسی خاص چیز یا موقعے کا غیر معقول خوف ہے۔اس کی کچھ اقسام درج ذیل ہیں۔

کلاسٹروفوبیا

بند جگہوں کے خوف کو کلاسٹروفوبیا کہا جاتا ہے۔ اس خوف کے شکار افراد لفٹ اور سرنگوں کے استعمال سے شدید پریشانی کا شکار ہو جاتے ہیں۔

زوفوبیا

جانوروں کے خوف کو زوفوبیا کہا جاتا ہے۔ یہ سپیسیفک فوبیا کی سب سے عام قسم ہے۔ اس کی اقسام میں سانپ، چھپکلی، پرندوں اور شہد کی مکھیوں کا خوف شامل ہے۔ عموماً لوگ بچپن میں ایسے کسی خوف کا شکار ہو جاتے ہیں اور اس کے اثرات تا عمر رہتے ہیں۔

ایسٹرافوبیا

طوفان کی گرج چمک سے خوفزدہ ہونے کو ایسٹرا فوبیا کہا جاتا ہے۔یہ خوف انسانوں کے علاوہ جانوروں میں بھی پایا جاتا ہے۔

ایکروفوبیا

بلند جگہوں اور اونچائی کے خوف کو ایکروفوبیا کہا جاتا ہے۔ اس خوف کے شکار افراد سیڑھیاں چڑھنے سےبھی گریز کرتے ہیں۔

ایروفوبیا

اس خوف کے شکار افراد جہاز میں سفر کرنے سے گھبراتے ہیں۔ اس کی وجہ کسی گزشتہ سفر کی بری یادیں یا کسی حادثے کا شکار ہونا ہو سکتا ہے۔

بلڈ۔انجکشن۔انجری فوبیا

فوبیا کی اس قسم میں ہیمو فوبیا (خون کا خوف) اور ٹرائےپینوفوبیا (انجکشن لگنے کا خوف) شامل ہیں۔ اس کے علاوہ ہاس فوبیا کا شکار لوگ زخموں اور آپریشن سے بھی خوفزدہ ہوسکتے ہیں۔

پیرانارمل فیئر

اس قسم میں جنات اور غیرمرئی مخلوقات کا خوف فیسموفوبیا شامل ہے۔اس کے علاوہ چمگادڑوں کا خوف کائیروپٹو فوبیا بھی اسی قسم میں شامل ہے۔

امیٹوفوبیا

قے آجانے کا خوف امیٹوفوبیا کہلاتا ہے۔ عموماً اس خوف کی شروعات بچپن میں ایسی کسی صورتحال کا شکار ہونے سے ہوتی ہیں ۔

کارسینوفوبیا

کینسر سے خوفزدہ ہونے کو کارسینو فوبیا کا نام دیا جاتا ہے۔ اس خوف کا شکار لوگ ہر بیماری کی علامت کو کینسر کا پیش خیمہ سمجھنے لگتے ہیں۔

نیو فوبیا

نئی چیزوں سے خوف اور پریشانی کا شکار ہونے کو نیوفوبیا کہا جاتا ہے۔

گرونٹوفوبیا

گرونٹو فوبیا کا شکار لوگ بڑھاپے سے یہاں تک کہ بوڑھے لوگوں سےبھی خوفزدہ ہوتے ہیں۔

اوڈونٹیافوبیا

اس فوبیا سے متاثر ہونے والے لوگ ڈینٹسٹ کے پاس جانے سے گھبراتے ہیں۔

خوف کے مرض کا شکار ہونا لوگوں کی زندگی پر گہرے اثرات مرتب کرتا ہے۔ایسے لوگ ایک طرف تو ان چیزوں سے بچنے کی راہیں تلاش کرتے ہیں جو ان کو خوفزدہ کرتی ہیں اور دوسری طرف وہ لوگوں سے اپنے خوف کو چھپانے میں بھی ہلکان ہوئے جاتے ہیں۔ ہپنو تھراپی اور کئی دوسرے طریقہ علاج اس مرض کی شدت کو کم کر سکتے ہیں۔ اگر آپ بھی کسی ایسے ہی خوف کا شکار ہیں تو اس سلسلے میں تنہا پریشان مت ہوں اور اپنے معالج سے ضرور اس بارے میں معلومات حاصل کریں۔

Share This:

The following two tabs change content below.
Sehrish
She is pharmacist by profession and has worked with several health care setups.She began her career as health and lifestyle writer.She is adept in writing and editing informative articles for both consumer and scientific audiences,as well as patient education materials.

Comments are closed.