حمل کے دوران قدرتی طریقے سے وٹامن ڈی کی کمی کو کیسے پورا کیا جائے؟

Healthy Lifestyle
Reading Time: 2 minutes
ماں بننادنیا کا سب سے حسین احساس ہے۔ جس دن عورت کو معلوم ہوتا ہے کہ وہ ماں بننے والی ہے اس دن سے لے کہ بچے کی پیدائش تک کا مرحلہ بے شک بہت مشکل مگر سب سے خوبصورت مرحلہ ہوتا ہے۔ ماں بھر پور کوشش کرتی ہے کہ وہ بچے کی دیکھ بھال میں ابھی سے کوئی کمی نا چھوڑے۔ اس مرحلے میں بہت سے ایسے مقام آتے ہیں جب ماں اپنی اور بچے کی صحت کو
ایک ساتھ بہتر بنانے ہیں ناکام رہتی ہے۔

دل برداشتہ ہونا، یا تھکن محسوس کرنا ایک فطری عمل ہے۔ لیکن اس بات کا ہر گز یہ مطلب نہیں کہ بچے کہ ساتھ اپنی صحت کا خیال مدِ نظر نہ رکھا جائے۔ حمل کے دوران بہت سے ایسے حالات آتے ہیں جب ماں کو ذیادہ کمزوری کا احساس ہوتا ہے۔ اسکی بے شمار وجوہات ہو سکتی ہیں۔ سب سے عام وجہ جسم میں وٹامن کی کمی ہے۔

وٹامن ڈی کی کمی حمل کے وقت اکثر خواتین میں پائی جاتی ہے۔ اس کی کمی کی وجہ سے ماں اور بچہ جن مسائل سے گزر سکتے ہیں وہ درج ذیل ہیں۔بچے کی پیدائش کے وقت پیچیدگی۔
ماں کی ہڈیوں میں شدید کمزوری۔
پیدائش کے وقت ماں اور بچے کی جان کو خطرہ۔

خواتین اس بات سے باخوبی واقف ہو گی کہ حمل کے دوران بچہ غذا کی آدھی غذائیت استعمال کر رہا ہوتا ہے۔ جسکا مطلب ہے کہ ماں کو دوگنی غذائیت کی ضرورت ہوتی ہے۔ حمل کے ابتدائی مراحل میں وٹامن ڈی کی کمی ہونے کہ امکانات بھڑ جاتے ہیں۔ غذاء کے ذریعے یہ کمی پوری کی جا سکتی ہے۔ حمل کے دوران کسی بھی پیچیدگی کی صورت میں پاکستان کے بہترین گائیناکولوجسٹ سے مرہم کے ذریعے اپائنٹمنٹ بُک کروائیں۔

درج ذیل غذاء کے ذریعے حمل کے دوران وٹامن ڈی کی کمی سے بچا جا سکتا ہے۔

انڈے کی زردی

انڈے کی زردی وٹامن ڈی کے حصول کے لئے انتہائی مفید ذریعہ ہے۔ حمل کے دوران اسکا استعمال ڈاکٹر کے مشورے کے ساتھ کیا جا سکتا ہے۔ کئی حالات میں ڈاکٹر انڈے کی زردی سے منع بھی کرتے ہیں مگر حمل کے آخری حصے میں اس کا استعمال مفید ہے۔ انڈے کی زردی وٹامن ڈی کے علاوہ جسمانی توانائی کے لئے بھی اچھا ذریعہ ہے۔

گائے کا دودھ

بکری اور گائے کا دودھ وٹامن ڈی کے حصول کے لئے نہایت ضروری ہے۔ بچے کے ساتھ ساتھ ماں کے لئے بھر پور غذاء ہے۔حمل کے دوران دودھ کا استعمال دوگنا کرنا چاہئیے۔ بکری اور گائے کا دودھ ہڈیوں کے لئے بھی فائدہ مند ہے۔

چکنائی والی مچھلی

سادی مچھلی حمل کے دوران اتنی فائدہ مند نہیں جتنی چکنائی والی مچھلی فائدہ مند ہے۔ اس کا کثرت سے استعمال ماں اور بچے کی صحت برقرار رکھتا ہے۔ اس کے علاوہ چکنائی والی مچھلی جسم کو حرارت پہنچا کے خون کی گردش کو بہتر کرتا ہے۔

کھانے والے مشروم

کھانے والے مشروم وٹامن ڈی فراہم کرتے ہیں ۔ اسکے علاوہ حمل کے دوران بچے اور ماں کے خون میں خلیوں کی مقدار بھڑہاتا ہے۔


حمل ایک انتہائی حساس مرحلہ ہے۔ ذرا سی غفلت ماں اور بچے دونوں کے لئے نقصان دہ ہو سکتا ہے۔ اس مرحلے میں ماں کے اوپر دوگنی ذمہ داری ہوتی ہے۔

Few Most Popular Gynecologists in Pakistan:

The following two tabs change content below.
I am a passionate content writer and media person. My work experience includes freelancing and advertising. I have also worked on bilingual content and campaigns.