ابتدائی حمل کی معمولی بیماریاں اور ان کی دیکھ بھال

Women's Health
pregnancy
Reading Time: 4 minutes

انسان کی کوکھ میں تخلیق ایک پیچیدہ عمل ہے۔ اس دوران خواتین کی صحت اور نفسیات میں بہت سی تبدیلیاں آتی ہیں۔ خاص طور پر حمل کے ابتدائی چند ماہ  خواتین کی صحت پر خاصے گراں ثابت ہو سکتے ہیں۔ اگرچہ یہ معمولی تکلیفیں مائیں خوش ہو کر جھیل لیتی ہیں لیکن کچھ آسان سے اقدامات کر کے آپ اپنی صحت کو بہتر کر سکتی ہیں اور اس سفر کی ناخوشگواریوں کو کم کر کے بچے کی صحت آمد کا بہتر انتظام کر سکتی ہیں۔

یاد رکھیں دوران حمل کوئی بھی دوا یا جڑی بوٹی کا استعمال ڈاکٹر کے مشورے کے بغیر کرنا محفوظ نہیں ہے۔ ان ادویات یا جڑی بوٹیوں کا اثر بچے کی صحت یا جسمانی ساخت پر ہو سکتا ہے۔ ایک اچھی گائناکالوجسٹ سے رابطہ اور مشورہ اہم ترین ہے۔

ذیل میں حمل کی ابتدا میں پیش آنے والی کچھ بیماریوں اور ان کی دیکھ بھال سے متعلق کچھ اہم مشورے آپ کی نذر ہیں۔

قے اور متلی

حمل کی ابتدا میں متلی شکایت نہایت عام ہے۔ خوراک اور طرز زندگی کی کچھ معمولی تبدیلیاں آپ کو اس بے آرامی میں افاقہ دے سکتی ہیں۔ بہت سی خواتین اس مسئلے سے باآسانی نمٹ لیتی ہیں لیکن کچھ لوگوں کے لئے شدید قے کی صورت ایک ایمرجینسی کی حالت کا باعث بن سکتی ہے۔ اگر آپ چوبیس گھنٹوں میں کوئی خوراک نی کھا سکی ہوں اور آپ کا وزن بتدریج گھٹ رہا ہو تو ڈاکٹر کی فوری توجہ کا ملنا آپ کی صحت کے لیے ضروری ہے ۔ اس کے علاوہ پانی کی کمی، سر چکرانا، آتھ گھنٹوں تک پیشاب نہ آنا اور پٹھوں میں کھچائو کی صورت میں فوری طور پر ڈاکٹر سے رابطہ کریں۔

آپ کیا کر سکتی ہیں؟

قے اور متلی کی صورت میں اگرچہ آپ کچھ بھی کھانا نہیں چاہیں گی لیکن کھانا پینا جاری رکھنا ہی اس حالت میں بہتری لا سکتا ہے۔خشک خوراک کا استعمال جیسے کے ادرک والے بسکٹ یا ڈبل روٹی کا استعمال اور لیموں سے بنے مشروبات پینا طبیعت میں بحالی کا باعث بن سکتا ہے۔ اسے طرح بہت زہادہ مسالہ دار کھانوں اور چکنائیوں سے پرہیز کرنا ہی بہتر ہے۔ ایک اچھے نیوٹریشنسٹ سے رابطہ کرنا بھی مفید ثابت ہوتا ہے۔

شدید قے کی صورت میں ڈاکٹر کی تجویز کردہ ادویات کا استعمال کرنے سے افاقہ ملتا ہے۔

خوراک کی نالی میں جلن اور سوزش

پروجسٹرون ہارمون کے زیراثر ہونے کی وجہ سے خوراک کی نالی میں معدے کے تیزاب کا بہائو الٹا ہو سکتا ہے۔ یہ علامت بہت عام ہے اور اس سے نمٹنے کے لئے آپ کو چکنائی والی غذائوں اور تیز مسالہ جات سے مکمل پرہیز کرنا ہوگا۔

آپ کیا کر سکتی ہین؟

اس علامت کو کم کرنے کے لیے ضروری ہے کہ آپ کھانا آہستہ اور چبا کر کھائیں۔ مسالا دار اور چربی والی غذائوں سے اجتناب کریں۔کھانے کے فورا بعد لیٹنے اور جھکنے سے پرہیز کریں۔سوتے ہوئے سر اونچا رکھیں اور  تیزابیت کم کرنے والی ادویات کا استعمال صرف ڈاکٹر کے مشورے سے ہی کریں۔

قبض

چالیس فیصد حاملہ خواتین کو قبض کی شکایت رہتی ہے۔ پروجیسٹرون ہارمون کےاثر کی وجہ سے آنتوں کی حرکت کم ہو جاتی ہے اور قبض کی صورتحال پیدا ہو سکتی ہے۔

آپ کیا کر سکتی ہیں؟

دن بھر مین آٹھ سے دس گلاس پانی ضرور پیئں۔ یہ کسی مشروب یا سوپ کی شکل میں بھی ہو سکتا ہے۔ خاص طور پر گرم مشروبات کا استعمال مفید ہے۔ بے چھنے آٹے کا استعمال اور سبزیوں اور پھلوں کی مناسب مقدار کا غذامیں شامل ہونا از حد ضروری ہے۔ اس کے علاوہ ایک فعال طرز زندگی برقرار رکھنا آپ کو اس شکایت سے آرام دلا سکتا ہے۔

دست آور ادویات کا استعمال ڈاکٹری مشورے کے بغیر ہر گز نہ کریں۔

یہ معمولی شکایات ایسی ہیں جن کا ایک اچھا طرز زندگی اختیار کر کے با آسانی مقابلہ کیا جا سکتا ہے۔ اپنی غذا کا خیال رکھنا اور جسمانی طور پر فعال رہنا آپ کی اور آپ کے بچے کی صحت پر اچھا اثر دالتا ہے۔

Few Most Popular Gynecologists in Pakistan:

Share This:

The following two tabs change content below.
Sehrish
She is pharmacist by profession and has worked with several health care setups.She began her career as health and lifestyle writer.She is adept in writing and editing informative articles for both consumer and scientific audiences,as well as patient education materials.