وٹامن اے کی کمی کی 6 نشانیاں جو خطرناک ثابت ہوسکتیں ہیں

Reading Time: 4 minutes

وٹامن اے بھی ڈی کی طرح ضروری وٹامن ہےہمارے جسم کے تمام فنکشنز کو اچھے طریقےسے کام کرنے کے لئےان تمام وٹامنز کی ضرورت ہوتی ہے جو ہمارے جسم کے لئے اہم ہیں۔ہم ان کی ضرورت کوتمام پھلوںاور سبزیوں سے پوراکرسکتے ہیں۔اور یہ تمام وٹامنز ان سے حاصل بھی کرسکتے ہیں۔

وٹامن اے کتنا ضروری ہے؟-

یہ ایک فیٹ سلیوبل (چربی) والا وٹامن ہے جو قدرتی طور پر کھانوں کی چیزوں میں بھی پایاجاتاہے۔یہ ہماری جسمانی صحت کے لئے بہت ضروری وٹامن ہے۔یہ ہمارے مدافعتی نظام کے لئے بہت اچھا ہے۔اس کے علاوہ یہ آنکھوں کی روزشنی کے لئے انتہائی ضروری وٹامن ہے۔ہمیں اپنی صحت کو بہتر بنانے کےلئے اس کا استعمال لازمی کرنا چاہیے۔

وٹامن اے ہمارے دل،گردوں اور پھیپھڑوں کو بہتر طریقے سے کام کرنے میں مدد فراہم کرتا ہے۔

وٹامن اے کن چیزوں میں پایاجاتا ہے؟-

وٹامن اے

یہ قدرتی طور پر بہت سے کھانوں میں پایاجاتا ہے۔ہم اس کو کن چیزوں سے حاصل کرسکتے ہیں وہ مندرجہ ذیل ہیں؛

ہم اس کو دودھ اور دہی سے حاصل کرسکتے ہیں۔-

بڑے گوشت میں بھی یہ پایا جاتا ہے لیکن اس میں کولیسٹرول کی مقدار بھی ہوتی ہے جو دل کی صحت کے لیے مضر ہے اس لئے اس کو کم ہی استعمال کرنا چاہیے۔

کچھ اقسام کی مچھلیوں میں بھی یہ پایا جاتا ہے جیسے سالمن۔-

ہم اس کو بہت سی سبزیوں سے بھی حاصل کرسکتے ہیں جیسےگاجر،بندگوبھی وغیرہ-

اس کے علاوہ وہ پھل جن میں یہ پایا جاتا ہے ان میں آم،کینواور خوبانی شامل ہے۔

یہ انڈے کی زردی میں بھی موجودہوتا ہے۔

اس کی کمی کی کونسی نشانیاں ہیں؟-

یہ ضروری وٹامن جسمانی فعال،آنکھوں کی روشنی اورمدافعتی نظام کے لئے اہم ہے۔اس کی کمی کی وجہ سے ہمیں شدید اسہال اور جگرکے امراض کا سامنا ہوسکتا ہے۔اوراس کی شدید کمی کی وجہ سے رات کو اندھاپن ظاہر ہوسکتا ہے۔

اس کی کمی کی نشانیاں مندرجہ ذیل ہیں؛

خشک آنکھیں-

وٹامن اے

یہ وٹامن آنکھوں کے لئےضروری وٹامن ہے۔اگر ہمارے جسم میں اس کی کمی ہوجائے تو آنکھوں کی روشنی ختم ہونے کا خطرہ ہوتا ہے۔جب ہماری آنکھیں خشک ہونے لگیں اور آنسو پیدا ہونے سے قاصر ہوں تو یہ آنکھیں خشک ہونے کی نشانی ہے۔یہ وٹامن ای کی کمی کی وجہ سے ہوتا ہے۔

آنکھوں کے لئے کونسے وٹامنز اچھے ہیں اگرآپ جاننا چاہے ہیں تو یہاں کلک کریں۔

خشک اور خارش والی جلد-

یہ وٹامن جلد کے خلیوں کی تعمیراور تشکیل میں مدد دیتا ہے۔اس کی کمی کی وجہ سے ہمیں جلد کے مسائل کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔اس میں جلد کا مسئلہ جیسے ایکزیما بھی اس کی کمی کا نتیجہ ہے۔یہ حالت خشک خارش اور سوجن کا سبب بنتی ہے۔جلد پر مہاسوں کا ہونا بھی وٹامن اے کی کمی کی وجہ سے ہے۔اس وٹامن کے مناسب استعمال سےجلد کی سوجن اور خارش کو دور کرسکتے ہیں۔

تولیدی مسائل-

وٹامن اے

اس کی کمی کی وجہ سے ہمیں تولیدی مسائل کا بھی سامنا کرنا پڑتا ہے۔اس کی جسم میں مناسب مقدار زرخیزی کو بڑھاتی ہے۔یہ ہمارے جسم کو اینٹی آکسیڈنٹ فراہم کرنے کے لئے اہم ہے۔کیونکہ یہ اینٹی آکسیڈیٹیو تناو کو کم کرنے میں مدد کرتا ہے جو زرخیزی کے لئے اہم ہے۔

نشوونما کے لئے-

ہم اکثر دیکھتے ہیں کہ کچھ بچے اپنی عمر سے بہت کم نظرآرہے ہوتے ہیں۔ لیکن ہوسکتا ہے ان میں کسی وٹامن کی کمی ہو جو ان کی نشوونما کو روکتی ہو،ہمیں اس کے بارے ایک ڈاکٹر ہی بہتر مشورہ دے سکتا ہے۔لیکن اگرہمارے جسم میں اس کی مناسب مقدار موجود نہ ہو تو بچوں کے اندر نشوونما کے مسائل پیدا پوتے ہیں۔

سینے اور گلے میں انفیکشن-

وٹامن سے کی کمی کی وجہ سے ہم بار بار گلے اور سینے کے انفیکشن میں مبتلا ہوسکتے ہیں۔یہ وٹامن سانس کے مسئلے سے بچانے کے لیے معاون ثابت ہوتا ہے۔ہمیں گلے کے انفیکشن سے بچنے کے لئے ان چیزوں کا استعمال کرنا چاہیے جو ہمارے جسم میں اس وٹام کی کمی کو پورا کرے اور ہمیں تمام جسمانی مسئلوں سے بچائے۔

زخم کا جلد ٹھیک نہ ہونا-

اگرآپ کوکوئی چوٹ آئی ہے یا کوئی سرجری ہوئی ہے تو اس کے بعد آپ کا زخم جلد ٹھیک نہیں ہورہا توآپ کو اس وٹامن اےکی کمی کی وجہ سے یہ مسئلہ پیش آسکتا ہے۔وٹامن اے کولیجن کی مقدار میں اضافہ کرتا ہے۔جو جسم کےتمام خلیوں کی تشکیل کے لئے ضروری ہے۔

کمی کو دور کیسے کیا جائے؟-

جسم میں کسی بھی وٹامن کی کمی ہمیں بہت سے مسائل سے دوچار کرتی ہے۔ ہمیں ان کی کمی کو دور کرنے کے لئے لازمی کچھ کرنا چاہیے۔ہمیں وٹامن اے کی کمی کو دور کرنے کے لئے ان تمام سبزیوں اور پھلوں کا استعمال کرنا چاہیے جو  وٹامن اے کی کمی کو دور کرے۔اس کے علاوہ بہت سے لوگ سیپلیمنٹس کا بھی استعمال کرتے ہیں لیکن آپ کو اس سے پہلے اپنے ڈاکٹر سے لازمی بات کرنی چاہیے۔

ایم مستند ڈاکٹر سے مشورہ کرنے لے لئے آپ مرہم ڈاٹ پی کے کی ایپ ڈاؤن لوڈ کریں اور ڈاکٹر کی اپائنمنٹ حاصل کریں اس کے علاوہ اس نمبر پر 03111222398 آن لائن کنسلٹیشن بھی لے سکتے ہیں۔

The following two tabs change content below.
Avatar
I developed writing as my hobby with the passing years. Now, I am working as a writer and a medical researcher, For me blogging is more of sharing my knowledge with the common audiences