ہارمونز کے عدم توازن کی کونسی نشانیاں ہیں؟

Reading Time: 3 minutes

ہت سی خواتین کو ہارمونز کے عدم توازن کی شکایت رہتی ہے،اس کی ایک سب سے بڑی وجہ یہ بھی کہ اچھا طرزِزندگی نہیں ہے اور بہت سی پریشانیوں اور الجھنوں کی وجہ سے بھی ایسا ہوتا ہے۔اس کے علاوہ بھوپور نیند نہ لینےسے بھی ہارمونز ڈسٹرب ہوتے ہیں۔
ہارمونز وہ کیمیکلز ہیں جو انڈوکرائن سسٹم میں غدود کے ذریعہ تیارہوتے ہیں اور خون کے دھاروں میں جاری ہوتے ہیں۔ان میں عدم توازن اس وقت پیدا ہوتا ہے جب ہارمونز بہت زیادہ یاکم ہوتے ہیں۔ہمارےجسم میں ہارمونز ہمارے تولیدی سائیکل،موڈ،جسم کا درجہ حرارت اور جسم میں بہت سے عملوں کو کنٹرول کرتے ہیں۔ہارمونز کے معمولی عدم توازن کی وجہ سےہماری صحت پر اثر پڑتا ہے۔
زندگی کے مختلیف مراحل میں قدرتی طور پر ہارمونز میں اتار چڑھاؤ آتا ہے خاص طور پر بلوغت کے دوران،عورتوں میں حمل کے دوران۔یہ طرزِ زندگی کی بھی وجہ سے متاثر ہوتے ہیں۔
سب سے اہم بات یہ ہے کہ جب ہم ان تبدیلیوں اور عدم توازن کو محسوس کریں تو ڈاکٹر سے معائنہ کروائیں۔ہارمونز کے عدم توازن کی وجہ کونسی نشانیاں ظاہر ہوتیں ہیں وہ مندرجہ ذیل ہیں؛

موڈ میں تبدیلی –

خواتین میں جنسی ہارمون ایسٹروجن کا اثر دماغ میں نیورو ٹرانسمیٹر پر ہوتا ہے،جس میں سیرٹونن (ایک ایسا کیمیکل جو موڈ کوبدلتا ہے ) حیض سے پہلے ہمارے مزاج میں تبدیلی ہوتی ہے یہ ہارمونز کے عدم توازن کی وجہ سے ہوتا ہے۔

کیا کرنا چاہیے؟-

اگر آپ اپنی روزمرہ زندگی میں پریشان ہیں تو غذا اور طرزِ زندگی میں تبدیلیوں کی وجہ سے بہتری آسکتی ہے۔ہم روزانہ ورزش کر کے اپنی صحت میں بہتری لا سکتے ہیں۔

تکلیف دہ حیض-

اگرآپ کو پیٹ کے نچلے حصے میں درد ہوتی ہےاور آپ باربا پیشاب کر رہے ہیں یا آپ کو قبض کی شکایت ہےیا کمر کے نچلے حصے میں درداور جنسی تعلقات میں تکلیف کا سامنا ہوتا ہے تو ہو سکتا ہے آپ کو فائبرایڈز ہوں اس کی کوئی اصل وجہ معلوم نہیں ہوئی لیکن ہو سکتا ہے یہ فیملی ہسٹری کی وجہ سے ہو۔

کیا کرنا چاہیےِ؟ –

اگر آپ کو ان مسائل کا سامنا ہے تو آپ مشہور گائناکولوجسٹ سے مشورہ کر سکتے ہیں اس سے پہلے کہ سنگین صورت پیدا ہو۔

نیند کی کمی –

جب ایسڑوجن اور پروجسڑون کی کم پیدا وار ہوتی ہے تونیند میں خلل پڑسکتا ہے اس کے علاوہ توانائی کی کمی بھی نیند کے معیار میں کمی ڈالتی ہے۔جب ہمارے ہارمونز عدم توازن پیدا پوتا ہے تو نیندمیں بھی فرق آتا ہے۔

کیا کرنا چاہیے؟ –

نیند کی کمی کو پورا کرنے کے لئے ہم ڈاکٹر سے بات کرکے ایسڑوجن اور پروجسڑون کی مقدار کو بحال کرسکتے ہیں۔اس کے علاوہ ہمیں بہترین نیند کے لئے ہمیں کیفین کی کم مقدار لینی چاہیے۔

وزن میں اضافہ –

ہارمونز کے عدم توازن کی وجہ سے وزن میں بھی اضافہ ہوتا ہےہم اپنی غذا میں تبدیلی کرکے اپنے وزن پر کنٹرول کر سکتے ہیں۔ہارمونز کی وجہ سے ہمارا اچانک وزن بڑھ سکتا ہے۔

جلد کے مسائل –

ایسڑوجن اور پروجسڑوجن کی کم پیدا وار کی وجہ سے ہماری جلد پر کیل مہاسے اور دانے بنتے ہیں۔جس کی وجہ سے ہم جلد کے مسائل کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔یہ بھی ہارمونز کے عدم توازن کی وجہ سے ہوتا ہے۔

سردرد –

بہت سی خواتین کو حیض سے پہلے سردرد کی شکایت رہتی ہےیہ سردرد ہارمونل تبدیلیوں کی وجہ سے ہوتا ہے۔

بانجھ پن –

ہارمونل عدم توازن کی وجہ سے خواتین میں بانجھ پن ایک اہم وجہ ہے،بانجھ پن کی وجہ ہارمونز میں بدلاؤ کی وجہ سے بھی ہوتا ہے۔
ہارمونز کے عدم توازن کی وجہ سے ہمیں بہت سے مسائل کا سامنا کرنا پڑتا ہے جس وجہ سے ہماری صحت پر بھی برے اثرات پڑتے ہیں۔لیکن ہم گھر بیٹھے ایک فون کال کی مدد سے مرہم۔پی۔کے کی ویب سائٹ سے ڈاکٹر کی اپائنمنٹ بک کروا سکتے ہیں اس کے علاوہ ہم وڈیو کال یا اس نمبر پر 03111222398 آن لائن کنسلٹشن لے سکتے ہیں۔

The following two tabs change content below.
Avatar
I developed writing as my hobby with the passing years. Now, I am working as a writer and a medical researcher, For me blogging is more of sharing my knowledge with the common audiences

Leave a Comment